Home / تازہ ترین / یورپی یونین نے کاروباری اصولوں کا خیال نہ رکھنے پر گوگل پر 2.4 بلین یورو جرمانہ عائد کر دیا

یورپی یونین نے کاروباری اصولوں کا خیال نہ رکھنے پر گوگل پر 2.4 بلین یورو جرمانہ عائد کر دیا

European Union Fined Google
برسلز(بی بی سی پاک نیوز): یورپی یونین کی جانب سے گُوگِل پر اربوں ڈالر جرمانہ عائد کر دیا گیا۔تفصیلات کے مطابق یورپی یونین نے انٹرنیٹ اور ٹیکنالوجی کی بادشاہ گُوگِل کمپنی پر2.4 بلین یورو کا جرمانہ عائد کیا  ہے۔ یہ جرمانہ عائد کرنے  کی وجہ گوگل کی  انٹرنیٹ پر کی جانے والی کاروباری سَرچ اور اسمارٹ فونز پر کسٹمرز پر اپنا کنٹرول حاصل  کرنے کی کوششیں ہیں۔یورپی یونین کی جانب سے کسی بھی  کمپنی پر عائد کیا جانے والا یہ اب تک کا  سب سے بھاری جرمانہ ہے۔ اس سے قبل  2009 میں یورپی  یونین نے بد اعتمادی کی بنیاد پر عالمی شہرت یافتہ کمپیوٹر ساز ادارے اِنٹل کو ایک ارب جرمانہ عائد کیا تھا۔ انٹل کمپیوٹر چِپ بنانے والی بہت بڑی  بین الاقوامی کمپنی ہے۔
یورپی کمیشن نے  گوگل کو 90 دن  کی مہلت دی  ہے کہ وہ کسٹمرز کو شاپنگ سروسز کی مد ميں دیا جانے والا ڈسکاؤنٹ فوری طور پر ختم کر دے۔ اگر یہ رعائت نہ ختم کی گئی  تو گوگل کے ذیلی ادارے ایلفابیٹ کی  روزانہ کی آمدن پر پانچ فیصد جرمانہ عائد کیا جا سکتا ہے۔اصل میں 2.7 بلین ڈالر کا جرمانہ یورپی یونین کی جانب سے کے  گوگل کی ایک ذیلی کمپنی ایلفابیٹ پر عائد کیا گیا ہے۔ یہ جرمانہ ایلفا بیٹ کی سالانہ حاصل ہونے والی آمدن کے تین فیصد کے برابر ہے۔ واضح رہے کہ  2013 میں امریکا میں یونین اور گوگل کے درمیان ہونے والی ڈیل کے بعد  یہ جرمانہ عائد کیا گیا ہے۔ اُس ڈیل میں گوگل کی ذیلی کمپنی ایلفابیٹ کوخبردار  کیا گیا تھا کہ وہ اپنی شاپنگ سرچ کے بعض مروجہ اصولوں کو تبدیل کرے لیکن ایلفا بیٹ کی جانب سے ایسا نہیں کیا گیا۔ اقتصادی ماہرین کے مطابق اتنے بھاری جرمانے سے گوگل کے مجموعی مالی اثاثوں کو کاری ضرب پہنچے گی۔
یورپی ریگولیٹرز کی تفتیش سے معلوم ہوا ہے کہ گوگل نے ایک منظم طریقے سے اپنے مخالفین کے آن لائن سرچ انجنوں کو بلاک کرنے کی کوشش کی تھی تا کہ اُن پر اشتہار چلانے کے سلسلے میں مسلسل کمی پیدا ہو سکے۔ تفتیش کے مطابق گوگل نے یہ پریکٹس براعظم یورپ کے مختلف ملکوں میں شروع کر رکھی تھی۔ ریگولیٹرز نے واضح طور پر اپنی رپورٹ میں بیان کیا ہے کہ گوگل کی پریکٹس ہر پہلو سے ایک غیرقانونی عمل ہے اور اس نے بداعتمادی کی فضا پیدا کی ہے۔

Check Also

پاکستان کے معاشی حالات خراب کئے جارہے ہیں، قر ضہ ادا کرنے کیلئے پیسے نہیں:ماہر اقتصادیات

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)ماہراقتصادیات ڈاکٹراشفاق نے کہاہے کہ حالات خراب کئے جا رہے …